Tharparkar, An Illustration of Bhuttoism

I Begin With The name of Allah, The Compassionate, The Merciful

I am never short of words when it comes to writing, but the catastrophic conditions in Thar are not only undescribable but are also a slap on the face of humanity. The naked dance of hunger, destitution and famine can put Bollywood item songs to shame. But what could be done when champions of “democracy” move on after feeding the masses with their empty slogans, making the poor and deprived people of Thar wonder if their purpose of vote was to face indigence and privation.

Today, 86 year old Qayim Ali Shah, woke up from an unrestricted sleep. With 94 shiny cars and 250 policemen, he came to visit Thar. Boarding and Lodging was arranged for This Royal, I mean, “Democratic” Caravan. The fact that it was all taken care of by tax payers money, “Thar-ians” were not even asked, much less offered anything. The “sailors” of the drowning Titanic of Constitution were fed with delicious and delighful cuisines but the owners of Thar’s barren lands with frail animals kept looking for the left overs of bread and clean water. This deed of “planners of Democracy” poked fun at the poverty of my brothers. Judging from that, I can say that the slogan of “Food, Clothing and Shelter” has been “ruthlessly implemented” in Thar and Interior Sindh.

The aid given by Provincial Government also proved to be an act of treachery and perfidy. Thousands of tons of wheat and mineral water got wasted. To top it off, mobile clinics were taken over by high ranking police officials and politicians as embellishers. What added fuel to the fire was the ignorant statement of Qayim Ali Shah that “Kids in Thar have died because of poverty and not hunger”. Perhaps, that alcoholic ignorant doesnt realize that hunger and starvation are caused by penury. Whether Shah said those words intentionally or otherwise, it is proved that Pakistan Peoples Party is avenging the death of its founder in the garb of Democracy.

PPP has been getting votes from the innocent and uninformed, using the name of its deceased and giving them death in return. Taking a look at the history, we learn that Mr Bhutto raised a slogan of “Food, Clothing and Shelter” which was never fulfilled. The manifesto is the same after 36 years but results are nowhere to be witnessed. Today, Bhutto’s legacy is “Hunger, Shroud and Grave” which is being witnessed in Interior Sindh, especially, Thar. There, the images of deprivation and destitution only show what has been passed down to future generations.

————————

Follow me on Twitter @periqlytos

تهرپارکر- بهٹو ازم کی منہ بولتی تصویر

بسم اللہ الرحمن الرحیم

یوں تو قلم بینی کے لیے مابدولت کے پاس الفاظ کی کمی نہیں مگر تهر کی ناگفتہ بہ صورت حال نہ صرف بیان سے باہر ہے بلکہ انسانیت کے منہ پر زناٹے دار طمانچہ بهی- یہاں بهوک، افلاس اور مرض کا ننگا ناچ شاید بالی ووڈ کے آئٹم سانگز کو شرما دے- مگر کیا کیجئیے جناب، جمہوریت کے علمبردار اپنے کهوکهلے نعرے لگا کر آگے بڑہ جاتے ہیں اور بے چاری روٹی کی ماری تهر کی عوام صرف یہ سوچتی رہ جاتی ہے کہ کیا مفلسی اور تنگدستی کا لبادہ اوڑهنے کے لیے ہی سیاست دانوں کو ووٹ دیےتهے۔

آج 86 سالہ قائم علی شاہ، خواب راحت سے اٹھ کر 94 فراٹے بهرتی گاڑیوں اور 250 پولیس اہل کاروں کے ساتھ تهر میں آ دهمکے- اس شاہی، میرا مطلب جمہوری قافلے کے قیام و طعام کا بندوبست ہوا- اس بات سے قطع نظر کہ اسکا انتظام بهی غریب عوام کے پیسوں سے ہوا، تهر کے عوام کو جهوٹے منہ پوچها تک نہ گیا- یہاں مرغن اور لذیذ کهانوں نے آئین کے ڈوبتے ٹائیٹینک کے ملاحوں کو خوب سیر کیا مگر تهر کے بنجر کهیتوں اور لاغر جانوروں کے مالک، روٹی کے جوٹهے ٹکڑوں اور صاف پانی کی بوندوں کو ترستے رہ گئے- “مدبرین جمہوریت” کی یہ ادا میرے بے کس و بے بس تهر کے بهائیوں کی غربت کا منہ چڑاتی رہی- ان نظاروں کو دیکھ کر راقم کو یہ کہنے میں عار نہیں کہ روٹی، کپڑے اور مکان کے نعرے کو تهر اور اندرون سندھ کے علاقے میں سفاکانہ انداز سے نافذ کیا گیا ہے۔

حکومت سندھ کی دی گئی امداد بهی نظر کا دهوکہ اور مکر و فریب کا نمونہ نکلی- ہزاروں ٹن گندم خاک کی نذر ہوگئی اور منرل واٹر کی بوتلیں ضائع ہوگئیں۔ ستم یہ کہ موبائل ڈسپنسریز پولیس کے اعلی عہدے داروں اور سیاست دانوں کے گهر اور فارم ہاوسز کی زینت بن گئیں- پهر جلتی پر تیل کا کام قائم علی شاہ کے جاہلیت میں لتهڑے قبیح بیان نے کر دیا کہ “تهر میں بچے بهوک سے نہیں، غربت سے مرے ہیں”- شاید شراب کے نشے میں دهت اس فقید العقل انسان نما درندے کو یہ ادراک نہیں کہ بهوک اور فاقے غربت سے آتے ہیں- ناجانے یہ بات سہواً کی گئی یا عمداً، ایک بات تو ثابت ہو گئی کہ پی پی پی، جمہوریت کا لباس پہن کر بهٹو کی موت کا بدلہ تهر کے لوگوں کو مار کر لے رہی ہے۔

یہ بات اظہر من الشمس ہے کہ پیپلز پارٹی شہیدوں کے نام پر اور معصوم لوگوں کو دهوکہ دے کر ووٹ کے بدلے موت دیتی رہی ہے، وہ بهی ارزاں قیمت پر- تاریخ کے دریچوں میں دیکها جائے تو پتہ چلتا ہے کہ بهٹو صاحب کا نعرہ روٹی، کپڑا اور مکان تها جو پورا نہ ہو سکا- 36 سال بعد بهی وہی نعرہ مگر نتائج ندارد- بهٹو کا ورثہ اب بهوک، کفن اور قبر ہو چکا ہے جسکی عملی مثال ہمیں اندرون سنده، بالخصوص تهر میں نظر آ رہی ہے۔ اب محتاجی اور مسکینی کے دلخراش مناظر چیخ چیخ کر دنیا سے یہ کہہ رہے ہیں کہ
“کل بهی بهٹو زندہ تها، آج بهی بهٹو زندہ ہے”

_________________________

ٹویٹر پر اتباع کیجئیے
@periqlytos