رومانیہ، سویل شہادہ اور پاکستانیوں کی غلط فہمیاں

رومانیہ، مشرقی یورپ کا ملک آج کل سیاسی چپقلش اور تنازعات کا شکار ہے۔ گرچہ اس کے حالات ملک خداد کی آپ بیتی سے کچھ مختلف نہیں، مگر میڈیا کی مہربانی سے اسکی خبر ملتی ہی نہیں۔ محض تین سے چار منٹ کی رپورٹ چلا کر اکتفاء کرلیا جاتا ہے۔ پچھلے کچھ دنوں سے رومانیہ ہمارے میڈیا میں دوبارہ زیر بحث ہے کیونکہ ایک مسلمان خاتون کی وزیر اعظم نامزدگی کو مسترد کر دیا گیا ہے، جس کی وجہ سے ہمارے میڈیا اور سوشل میڈیا پر بیٹھے “اہلِ دانش” میں سراسیمگی کی کیفیت پائی جاتی ہے۔ میری ادنی سی کوشش ہوگی کہ رومانیہ کی حالیہ سیاسی تاریخ پر ایک سرسری نظر ڈالی جائے تاکہ اس ملک کے بارے میں غلط فہمیاں دور کی جاسکیں۔ 


رومانیہ میں سیاسی مسائل تو بہت رہے ہیں مگر حالات دگرگوں اس وقت ہوئے جب جون ۲۰۱۵ میں ان کے وزیر اعظم ویکٹر پونٹا پر ان کی قومی تحقیقاتی ایجنسی، ڈی این اے نے سنہ ۲۰۰۷ سے ۲۰۱۱ تک ٹیکس نادہندہ ہونے اور منی لانڈرنگ میں ملوث ہونے کا الزام لگایا۔ یہ اپنی نوعیت کا انوکھا کیس تھا جس میں کسی طاقتور شخصیت  پر براہ راست الزام لگا تھا۔ ڈی این اے، وزیراعظم کو گرفتار کرنا چاہتی تھی، مگر ان کی جماعت کی پارلیمنٹ میں اکثریت کی وجہ سے انہیں کسی بھی قانونی کارروائی سے مثتثنی قرار دے دیا گیا۔ 


ویکٹر پونٹا کی گرتی ساکھ کو آخری دھچکا اس وقت لگا جب ۳۰ اکتوبر ۲۰۱۵ کو دار الحکومت بوخاریسٹ کے ایک نائٹ کلب میں آتشزدگی کے دوران بھگدڑ مچ گئی جس کے نتیجے میں ۳۰ سے زائد افراد جھلس کر اور کچل کر ہلاک اور ۱۸۰ سے زائد زخمی ہوگئے۔ اس سے اگلے ہی دن عوام حکومت کے خلاف سڑکوں پر نکل آئی۔ لگ بھگ، بیس ہزار لوگوں نے شہر بند کرکے قومی جھنڈوں میں سوراخ کردیے اور حکومت وقت کو “قاتل” اور “مافیا” جیسے القابات سے نوازا۔ چار دن کے مسلسل مظاہروں کے بعد وزیراعظم ویکٹر پونٹا اور وزیر داخلہ گابریل اوپریا سمیت تمام کابینہ مستعفی ہوگئی۔


حکومت کے چلے جانے کے باوجود عوام کا غصہ ٹھنڈا نہ ہوا اور انہوں نے فوری انتخابات کا مطالبہ کردیا۔ اس کی تائید ہمسایہ ملک بلغاریہ، فرانس اور برطانیہ میں رہنے والے تارکین وطن نے بھی کردی۔ یہ بات قابلِ ذکر ہے کہ مظاہرین کی ایک بہت بڑی تعداد نوجوانوں کی بھی تھی جس نے اس اندوہناک حادثے کو اپنے اوپر حملہ قرار دیا تھا۔


صدر کلاوس اوہانیس (پہلی تصویر) نے حالات کی نزاکت کو دیکھتے ہوئے ایک ٹیکنوکریٹ، داسیان سیولوس (دوسری تصویر) کو وزیراعظم نامزد تو کردیا۔ مگر عوام کے غیظ و غضب پر قابو نہ پا سکی۔ 

کرپشن پر عدم برداشت کا وعدہ کرتے ہوئے رومانیہ میں تمام سیاسی جماعتیں ۱۱ دسمبر ۲۰۱۶ کو پارلیمانی انتخابات کے لیے آمنے سامنے آئیں۔ اس میں بائیں بازو کی سوشل ڈیموکریٹس کے امیدوار لیویو دراگنیا نے واضح اکثریت حاصل کی۔ تاہم انہیں اندازہ نہیں تھا کہ 2012 کے انتخابات میں بے ضابطگیوں پر انہیں نا اہل قرار دیا گیا تھا۔ لہذا اس انتخابات میں ان کی اہلیت چیلنج ہوگئی۔ یہی وجہ ہے کہ سوشل ڈیموکریٹس نے ایک ترک، تاتاری مسلم خاتون، سویل شہادہ کو نامزد کیا۔ مگر ان کی نامزدگی پر بھی سوالات اٹھ گئے۔ اسکی دو وجوہات بنیں۔ ایک؛ مسز شہادہ کا سیاسی تجربہ صرف چھے ماہ ہے، جس میں وہ ویکٹر پونٹا کی حکومت میں رہیں۔ دوسرا، ان کے شوہر، اکرم شہادہ بزنس میں ہیں اور شامی صدر، بشار الاسد کی کابینہ میں مشیر برائے زراعت رہے ہیں۔

مسز شہادہ کے مذہب سے رومانیہ کے لوگوں کو کوئی دلچسپی تھی اور نہ ہی کسی نے اس پر کوئی سوال اٹھایا۔ مگر بدقسمتی سے پاکستانی میڈیا کے کچھ لوگوں نے بغیر سوچے سمجھے، مسز شہادہ کی عدم نامزدگی کو اسلام دشمنی کا لیبل دے دیا۔ ان کی خدمت میں ایک ہی عرض ہے؛ خدارا ہوش کے ناخن لیں۔ رومانیہ، یورپ کا سب سے غریب ملک ہے۔ اسکے لوگ ہمارے لوگوں کی طرح غریب اور ان کی اشرافیہ، ہماری اشرافیہ کی طرح امیر کبیر۔ از راہِ کرم، بین الاقوامی خبروں کا مطالعہ کریں،  رومانیہ کے کراچی، لاہور اور اسلام آباد میں سفارت خانے سے رابطہ کریں تاکہ آپ کے سامنے کچھ حقائق آسکیں۔ مگر یہ کیونکر ہو۔ جہاں وزارت خارجہ اس قدر غیر فعال ہے کہ ملکی میڈیا کو رومانیا کے ساتھ دفاعی تعلقات کے بارے میں بریفنگ ہی نہ دی گئی۔

ریڈیو پاکستان کا قوم پر اتنا احسان ضرور ہے کہ اس نے یہ بتانا گوارا کیا کہ میاں نواز شریف، بوسنیا کے حالیہ دورے کے بعد رومانیا رکے تھے۔

اخیراً، ایک مختصر سی عرض کروں گا کہ جہاں دنیا بھر میں ممالک مفادات کے لیے قریب آ رہے ہیں، وہاں سوشل میڈیا پر چلتی من گھڑت خبروں (فیک نیوز) کا دور دورہ بھی ہے۔ خبر پر مکمل تحقیق، وقت کی اہم ضرورت ہے۔ کہیں ایسا نہ ہو کہ مذہبی تعصب کے بھیس میں کوئی من گھڑت خبر دوسرے ممالک کے ساتھ تعلقات پر ضرب  لگادے۔ سورة الحجرات کی چھٹی آیت ہی سبق کے لیے کافی ہے۔

يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا إِنْ جَاءَكُمْ فَاسِقٌ بِنَبَإٍ فَتَبَيَّنُوا أَنْ تُصِيبُوا قَوْمًا بِجَهَالَةٍ فَتُصْبِحُوا عَلَىٰ مَا فَعَلْتُمْ نَادِمِينَ

اے لوگو، جو ایمان لائے ہو! اگر کوئی فاسق تمہیں خبر دے تو تم اس کی اچھی طرح تحقیق کر لو۔ ایسا نہ ہو کہ نادانی میں کسی قوم (یا گروہ کو) کو ایذا پہنچا بیٹھو پھر اپنے ہی کیے پر پشیمانی اٹھاؤ۔


۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ٹویٹر پر اتباع کریں

@periqlytos

Advertisements

What did I Learn From Crisis in Brazil?

Brazil, the biggest country in Latin America, has been rocked by political scandals. President Dilma Rouseff has stepped aside by giving her position to Vice President Michel Temer, till the investigations against her are finalized.

The stories of corruption are not strange in Brazil but the political fiasco made global headlines when former President, Luiz Inacio Lula Da Silva was detained for questioning. He was accused of bribery and corruption in State-Owned Petroleo Brasileiro (Petrobras) during his time in office (2003-2010). Da Silva was accused of money laundering and using offshore companies to buy beachfront properties in Sao Paolo as well as use Mossack Fonseca’s office in Brasilia to hide the ownership of ill gotten assets.

The political controversy did not end there. In 2011, when Dilma Rouseff was chairwoman of Petrobras, Nestor Cervero, the company’s Director of International Operations, laundered money to buy expensive properties in Rio De Janeiro. He also gave bribes to Speaker of the Congress, Eduardo Cunha who also belonged to Democratic Movement (PMDB), the opposition party. Money was also funneled in the party’s account by Lobbyist Fernando Soares. In August of 2015, both Cervero and Soares were found guilty of money laundering and are currently facing prison sentences of 12 and 16 years respectively.

Cunha, who was leading the struggle to root out corruption from the country and remove President Rouseff, was exposed in 2015 by Swiss authorities. It was reported that he and his family members had secret bank accounts that were not disclosed to Brazilian authorities. Things took a turn to worst when Panama Papers named him as a beneficiary of the bribes paid by offshore companies in British Virgin Islands. These were owned by Portugese businessman Idalecio de Castro Rodrigues de Oliveira. His company partnered with Petrobras and channeled money into Cunha’s accounts in Panama and Switzerland.

The case caused a lot of stir and was called “Operação Lava Jato”, Portugese term for “Operation Car Wash”. It resulted in arrests of high profile politicians namely Fernando Collor de Mello, (Another Former President of Brazil), Treasurer of ruling party, João Vaccari Neto and former Mines and Energy Minister, Edison Lobão. This case of high eminence was presided by Justice Sérgio Moro, who has now become a national hero.

Justice Moro tried to get Luiz da Silva arrested but failed to do so. In March, President Rouseff used the constitution to appoint her predecessor as chief of staff of Brazil, so he could claim immunity and escape the charges. But Justice Moro effectively stopped it by releasing the telephonic conversations between Rouseff, da Silva and other judges. Some criticized this move while others hailed it and celebrated around the nation.

The Parliament, which was in deep slumber finally woke up when on May 5th, Prosecutor General, Rodrigo Janot took an extraordinary step by suspending speaker Eduardo Cunha from his position as he may face charges similar to Rouseff and da Silva. He is also being investigated for abuse of power, intimidating and threatening lawmakers and obstruction of justice. He could face impeachment and even jail time, if convicted in the court of law.

The political situation in Brazil is bad to the extent that one of the founders of Workers Party, (ruling Party) 93 year old Helio Bicudo, expressed his disappointment in these words;
“The Workers Party was a party of hope, but its leaders got intoxicated by power, and now that hope has been dashed”.

Brazil has taken a risky path. With Summer Olympics around the corner, epidemic of Zika virus combined with political turmoil, things will not be easy any time soon. Bringing the corrupt to justice will be a key to attract foreign investments which are in record decline. Unless the judiciary takes extreme steps by bringing the ill gotten wealth back, Brazil’s economy will be in a constant state of slump. All three branches of the government should come up with a  temporary solution till the end of Summer Olympics. Better financial system will have an effect on neighboring Venezuela, Colombia, Bolivia, Uruguay and other countries Brazil shares its border with.

The crisis in Brazil has taught me a lesson. Two people, Rodrigo Janot and Justice Sérgio Moro, took a bold initiative by standing up to those who are hell bent in destroying the country. They want to see their country prosper and blossom on the map of the world. Through their actions, they are proving that justice is the key to progress and development. I expect the attorney general of Pakistan, Mr Ashtar Ausaf and Justice Anwar Zaheer Jamali to take a firm stand against corruption and take the judiciary on board. Our esteemed judicial system takes actions on non issues. For once, I expect them to take the untouchables to task. With accountability, they can take the nation forward, else an unending cycle of favoritism towards them will maintain their villainy towards the citizens.

 


 

follow me on twitter: periqlytos

So, Are You Ready?

I Begin With The Name of Allah, The Compassionate, The Merciful.

Mr Gaurav Arya

Let me begin by saying that I am neither a soldier, nor a political analyst. I am just an avid reader of news and current events, with a desire to get into the depth of every story. I came across your open letter to Pakistan’s Chief of Army Staff, General Raheel Shareef. It was quite entertaining, yet audacious. This brazen attempt by you has prompted me to write a humble response.

Sir, Your claim that “We are adversaries, not enemies” is far fetched from reality. The seeds of enmity and antagonism were sown the very moment India refused plebiscite in Kashmir and entered its forces there. It resulted in a number of wars in which Pakistan had the upper hand, despite being outnumbered by India. If it was not for United Nations, Pakistan would’ve not only taken Kashmir back but also include Muslim majority areas into its territory, resulting in reduction of India to the sizes of Hawaii and Polynesia.

Without any doubt, the war of 1971 was a display of State Terrorism by India. If its military is not ornamental, why did it need the help of other countries to separate Bangladesh. Groups like Balochistan Liberation Army (BLA) in Balochistan and Mutahida Qaomi Movement in Karachi became the new Mukti Bahni’s. This all got the cover of The Cold Start Doctrine. Three major operations have been conducted to justify CSD; Operation Vijaye Bhava, Operation Parakram and Operation Sudarshan Shakti. Ironically, all on the border with Pakistan. The purpose of these operations is none other than creating fear and intimidate Pakistan. You as an ex military man are perfectly aware of it.

Mr Arya! Major Shabbir Sharif gave his life in 1971 to stop State sponsored terrorism by India. His Younger Brother, Raheel is continuing the legacy to root out  terrorism from Pakistan. He has started Operation Zarb e Azb which is successfully heading towards logical conclusion. Your proxies and hideouts inside Pakistan and Afghanistan are being eliminated, so your wish; “To fight the good fight… man to man… face to face…” could be granted.

So, Are you ready?

Respectfully,

Ahmed Khan,
A Humble Pakistani.

 

———————————————————shabbir_raheel

 

Follow me on Twitter: @periqlytos

Revisiting National Action Plan in the light of Bacha Khan Tragedy

I Begin With The Name Of Allah, The Compassionate, The Merciful.

 

Today, a horrific attack on Bacha Khan University took place in Charsadda, which brought back gruesome memories of the attack on Army Public School, Peshawar. This beastly act of terrorists resulted in the loss of 15 precious lives. May Allah give the Martyrs the best place in Heaven and give us and their loved ones the courage to bear their immense and irreplaceable loss.

This grisly and frightful incident raises some questions on the behavior of ALL of our political parties towards NAP (National Action Plan). Not only the  attitude of our leaders is lousy, rotten, contemptible and outrageous, its outright criminal and swinish to say the least. In the 20 points of NAP which were agreed upon, only 1 has been fulfilled; i.e, Execution of convicted terrorists. Other 19 are waiting to be implemented. The reason is plain simple and as obvious as a day light. The majority members of status quo in Pakistan have direct links to banned outfits. Hence its not an open secret that they’re vehemently and impulsively against formation of Military courts.

Failure of the ruling party, Pakistan Muslim League Nawaz on federal level is the major reason why National Action Plan is not in full effect. Article 245 of the Constitution  should’ve been invoked at the beginning of Operation Zarb e Azb in 2014. The Sub Clause (1) explicitly says:
“The Armed Forces shall, under the directions of the Federal Government, defend Pakistan against external aggression or threat of war, and, subject to law, act in aid of civil power when called upon to do so,”.
It further states in Sub Clause 2:
“The validity of any direction issued by the Federal Government under clause (1) shall not be called in question in any Court.”
I am of the opinion that Chief of Army Staff, General Raheel Sharif should’ve quietly enforced the implementation of Article 245 on top of National Action Plan and then start the operation from Islamabad, where Lal Masjid and Jamia Hafsa are located. This is a place where  a lethal combination of hate speech and religious extremism was created for the country. The arrest and sentencing of Molvi Abdul Aziz and his terrorist thugs through Military Courts not only would’ve sent a strong message to all the banned outfits but also help restore the confidence of citizens on the dismembered and crippled justice system. From there, progression towards other felonious organizations would’ve lead the Army to an unending trail of money and eventually their financiers.

Using the garb of democracy, some parties used constitution and power to get exemption from prosecution. Recent case of passing of the Criminal Prosecution Service Bill in Sindh Assembly (which enables the provincial government to withdraw any subjudice case against any politician) is the biggest proof that the status quo is against every measure that makes them accountable for their actions. This atrocious stunt is obvious that Sindh Government wants to lock its horns with GHQ. Since PPP claims to abide by the constitution, their preposterous act triggers Article 6 of the constitution.

In Khyber Pakhtunkha, Chief Minister, Pervez Khattak should’ve asked General Raheel Sharif to conduct sting operations in different parts of the province, as an extension of significant breakthroughs made in Waziristan and Federally Administered Tribal Areas. This would’ve earned praise among Pakistanis, especially the citizens of KP, who have paid the highest price in the war on terror. But Waziristan and FATA, both fell victims to bureaucracy as federation and province failed to determine their authority and jurisdictions on the areas. It wont be wrong to say that KP government shares the blame for security lapses resulting in APS tragedy in 2014 and now Bacha Khan University incident.

The question we should all ask is whats next. Should things remain the way they are or should change for better? The likely response will be in the favor of latter. We must revisit the National Action Plan. The Army should not wait for the government as its actions are already causing unnecessary delays. Following the footsteps of Operation Zarb e Azb which was started without the approval of federation, the same should be done to active and strengthen National Counter Terrorism Authority (NACTA). The consent of politicians is not needed anymore as the nation has finally understood that its alleged elected leaders aren’t in a position to do anything other than filling their own bank accounts. Despite repeat reminders of improving governance by the military, politicians are active in doing otherwise. First criteria of improving governance is better law and order alongside speedy justice. Fast track to improvement of judiciary will be the formation of mobile courts on district levels. Hate speech should be curbed by  introducing new curriculum. Scholars from all walks of life should get together and point out individuals and places that spew hatred which in return defame and divide us. Minorities should be given the utmost protection as they’ve been persecuted for the longest. Safeguarding their places of worship will ensure their integration in the society. They must be engaged in bringing peace and harmony in our nation.

Media must play an important role in recognizing deeply rooted and chronic issues. Instead of pointing out the problems with endless looping of images with loud and bothersome music, bring people of knowledge to sort out them out and disentangle the quandaries. Introduce people with special needs in the media as they deserve to be heard too. They also have solutions to the problems of society. We must admit that that they’ve been overlooked and ignored for the longest. By accommodating them we can move ahead as a society.

It has to be understood that Karachi Operation is an integral and inseparable part of Operation Zarb e Azb. Its an undisputed fact that political parties like Pakistan Peoples Party and Mutahida Qaomi Movement are trying their best to hide behind the constitution or by clinging to power to claim and secure immunity. This has to come to an end. Speeding up the trial of Dr Asim Hussain will facilitate in cutting the red tape of bureaucracy. Else the hopes of people will start fading. All the efforts by the Military will wither beyond imagination.

Pakistan Army will have to come up with a strict policy to deal with Afghanistan. President Ashraf Ghani, Chief executive Abdullah Abdullah, National Directorate of Security and all the warring factions should be brought together to come up with a solution that brings peace in the country. Unless achieved, all of Asia will be in a continuous and uninterrupted turmoil with no end in sight. An emergency meeting of Organization of Islamic Cooperation should be called to arrange a peace keeping force from all Muslim countries. Ensuring safety and long lasting peace paired with reconstruction efforts will pave the way for dignified repatriation of refugees to their homeland.

The above mentioned things will have to be done in little to no time. Conclusive and irrevocable decisions will help us deal with ever changing global geo politics. Else skating on thin ice will be a catalyst to our downfall.

______________________________

Follow me on Twitter
@periqlytos

 

P.S. Someone kindly tell Ministry of Interior that NACTA’s website is still under construction since January 2015. Its been seeking attention for a year already. Thanks.

انداز تخاطب، ایک لمحہ فکریہ

اکثر غیر سیاسی و غیر سنجیدہ موضوعات پر تحریر اور زباں بینی جوئے شیر لانے کے برابر ہوتی ہے مگر آج ایک ایسا موضوع سامنے آیا جس پر زور عقل و قلم جواب دے گئے- پھر بھی خامہ فرسائی کی ادنی سی کوشش کر ڈالی- امید ہے کہ اہل فکر و دانش کے ذہنوں میں سوچ بیدار ہوجائے-

اکثر مشاہدے میں آیا ہے کہ کچھ گاہک دکاندار سے اس انداز میں بات کرتے ہیں جیسے وہ کوئی پیروں میں مسل دینے والے گٹر کے کیڑے ہوں- عزت سے بات کرنا تو وہ کسر شان سمجھتے ہیں- گھمنڈ کا غراٹا اور لہجے کی کثافت میں لپٹا تعفن زدہ رویہ، روزگار کے ہاتھوں مجبور، زبان تھامے دوکاندار کو عرق انفعال پونچھنے پر مجبور کردیتا ہے- ایسے لوگ بادی النظر میں مانند عزازیل ہیں جن کی اوقات پھوٹی کھوڑی کی نہیں ہوتی جبکہ زبان چار ہاتھ کی ہوتی ہے- دنیا کی کوئی دولت ان کا رویہ ٹھیک نہیں کرسکتی- اسے میری ذاتی رائے کہا جائے یا کڑوا سچ مگر اس طرح کے لوگ غرض کے باولے ہوتے ہیں جو کسی اور کی سننے کی بجائے اپنی ہی گائے جاتے ہیں- یہ غضب کے دیدہ اپنی غلطی ماننے کی بجائے دکاندار کے سر پر سارا الزام تھوپ کر اپنے آپ کو بری الذمہ قرار دے دیتے ہیں-

ان جیسوں کے لیے ایک سادہ سی عرض ہے کہ “زبان شیریں تے ملک گیریں”- دکاندار آپ ہی کی طرح انسان ہے، آپ کے دار کا کتا اور مگس راں نہیں جو آپ کے غصے کے درآمد ہونے پر بھی چپ سادھ لے- چند روپوں کے منافع میں دربستہ وہ آپ کا کام بھی کرے آور در در پھٹ پھٹ بھی سنے- ہاں! بعد از خرید کسی چھوٹے مسئلے پر لہجے میں معمولی درشتی سمجھ تو آتی ہے مگر ملامت و ملاعنت کرتے ہوئے آپ لمحہ اغلاط میں داخل ہوسکتے ہیں اور ملاحی گالیوں میں بات لڑائی جھگڑے تک پہنچ سکتی ہے- لہذا کوشش یہ کیجئیے کہ لہجے کو دھیما اور رویے کو ٹھنڈا رکھیئے- ہم وہ باتیں بھول چکے ہیں جو ہمارے پرکھوں نے کہی تھیں- اگلے وقتوں کی باتیں اور اقدار آج دقیانوسی کہلاتی ہیں- کچھ بھی ہو، تمیز کی روش قدامت پسند ہی سہی، مگر قد رعنا رکھتی ہے- ویسے اخلاق، تہذیب و متانت کی ترغیب، ہمارا دین قدسی بھی دیتا ہے- مولانا حالی کی مندرجہ ذیل نظم پڑھئیے اور اپنی زندگی میں تعلقات عامہ کو بہتر کیجئیے-

بڑھاؤ نہ آپس میں ملت زیادہ
مبادا کہ ہوجائے نفرت زیادہ
تکلف علامت ہے بیگانگی کی
نہ ڈالو تکلف کی عادت زیادہ
کرو دوستو پہلے آپ اپنی عزت
جو چاہو کریں لوگ عزت زیادہ
نکالو نہ رخنے نسب میں کسی کے
نہیں اس سے کوئی رذالت زیادہ
کرو علم سے اکتساب شرافت
نجابت سے ہے یہ شرافت زیادہ
فراغت سے دنیا میں دم بھر نہ بیٹھو
اگر چاہتے ہو فراغت زیادہ
جہاں رام ہوتا ہے میٹھی زباں سے
نہیں لگتی کچھ اس میں دولت زیادہ
مصیبت سے ایک اک سے احوال کہنا
مصیبت سے ہے یہ مصیبت زیادہ
کرو ذکر کم اپنی داد و دہش کا
مبادا کہ ثابت ہو خست زیادہ
پھر اوروں کی تکتے پھرو گے سخاوت
بڑھاؤ نہ حد سے سخاوت زیادہ
کہیں دوست تم سے نہ ہوجائیں بد ظن
جتاؤ نہ اپنی محبت زیادہ
جو چاہو فقیری میں عزت سے رہنا
نہ رکھو امیروں سے ملت زیادہ
وہ افلاس اپنا چھپاتے ہیں گویا
جو دولت سے کرتے ہیں نفرت زیادہ
نہیں چھپتے عیب اتنی ثروت سے تیرے
خدا دے تجھے خواجہ ثروت زیادہ
ہے الفت بھی وحشت بھی دنیا سے لازم
نہ الفت زیادہ نہ وحشت زیادہ
فرشتے سے بہتر ہے انسان بننا
مگر اس میں پڑتی ہے محنت زیادہ
بکے مفت یاں ہم زمانہ کے ہاتھوں
پر دیکھا تو تھی یہ بھی قیمت زیادہ
ہوئی عمر دنیا کے دھندوں میں آخر
نہیں بس اب اے عقل مہلت زیادہ
غزل میں وہ رنگت نہیں تیری حالی
الاپیں نہ بس آپ دھیرت زیادہ

ثبوت بدیہی تو مابدولت نے دے دیے- اگر  ثبوت تردیدی ہوں تو جواب ضرور لکھئیے گا-
————————————-
ٹویٹر پر اتباع کریں
@periqlytos
————————————-

روح کون۔ بدروح کون؟

بسم اللہ الرحمن الرحیم

آج مطیع اللہ جان صاحب کا مقالہ “سو پیاز اور” نوائے وقت کی ویب سائٹ پر دیکھا۔ (اس کا ربط یہاں ہے)۔ مصنف کی تحریر اس وقت سامنے آ رہی ہے جب پاک افواج آپریشن ضرب عضب میں پے درپے  میں کامیابیاں حاصل کر کے عوام میں اپنا اعتماد بحال کر رہی ہے۔ موصوف کی تحریر پڑھ کر گمان ہونے لگا ہے کہ ایک منجھے ہوئے صحافی کا اگر یہ انداز کتابت ہے تو باقی صحافی برادری کا کیا حال ہوگا؟ تاریخ سے نا واقفیت ایک جانب مگر اردو زبان میں  اندازِ نگارش، بڑی ڈھٹائی سے لغت و فرہنگ سے نا محرمی اور اجنبیت کا پتہ بھی دے رہی ہے۔

مطیع جان اور ان جیسے صحافی جنرل ضیاء الحق اور جنرل مشرف کو ایسی سنتِ مؤکدہ سمجھ کر کوستے ہیں جیسے وطن عزیز شاید آمروں کے دور میں ہی آزاد ہوا ہو۔ انہیں تو ذو الفقار علی بھٹو نظر ہی نہیں آتے جنہیں کرسی طاقت پر براجمان کرانے والے جنرل گل حسن اور ایئر مارشل رحیم خان تھے۔ کیا جان میاں بھول گئے کہ مشرقی پاکستان کے بھائیوں کو دیوار سے لگانے میں بھٹو صاحب کا کتنا بڑا ہاتھ تھا، انہیں گالیوں سے نوازنے میں انہوں نے کتنا فخر محسوس کیا۔ سب سے بڑھ کر ملک کو دو لخت کرنے کا قبیح فعل بھی ان کے سر جاتا ہے۔ صرف یہی نہیں، اپنے “جمہوری” دور میں مخالفوں کو مروایا، سینکڑوں کو جیلوں میں ڈالا اور میڈیا پر پابندیاں لگائیں۔  وہی بھٹو جو مشرقی پاکستان میں انصاف نہ دے سکا، اس نے روٹی، کپڑے، مکان کا ایسا نعرہ کذب لگایا کہ جب گڑھی خدا بخش میں منوں مٹی تلے  دفن ہوا تو صرف گنتی کے چند لوگ باہر نکلے- اسے کہتے ہیں انتقام قدرت- جو قوم کو کچھ نہ دے سکا، اسے قوم نے کچھ نہ دیا- افسوس تو یہ ہے کہ مطیع صاحب کو کچھ بھی یاد نہیں۔ ہاں! اگر یاد ہے تو وہ قتل جس کا رونا وہ اور بھٹو کے چیلے 38 سال سے روتے آ رہے ہیں۔ ان کو باور کرانا ضروری ہے کہ جو سلوک بھٹو صاحب نے قوم کیساتھ کیا، اس سے بد تر حال پھر ان کا بھی ہوا۔ مگر ماتم ہے قوم کی یادداشت کا۔ انہیں عمل (ایکشن) تو یاد نہیں مگر رد عمل (ری ایکشن) “زندہ ہے بھٹو زندہ ہے” کی شکل میں ازبر ضرور ہے۔

  مطیع میاں کے خزانہ علم میں اضافے کی کمزور جسارت کروں کہ وہ “جمہوری” دور ہی تھا جس میں فلمی ٹکٹیں بلیک کرنے والے ان کے پییر و مرشد حضرت دس فیصد مد ظلہ و مغفور من العدالة الباکستانیة، المعروف آصف علی ولد حاکم علی زرداری بزنس میں جلوہ افروز ہوئے تھے- اب صاحب، یہ گناہ بھی ضیاء پر مت ڈالئیے گا کیوں کہ انہیں اللہ میاں کے پاس پہنچے ایک زمانہ ہوچکا تھا- یہ “جمہوریت” کا پھل تو کسی عام پاکستانی کو ملا تو نہیں، البتہ اس کی فیض و برکت سے کروڑ ہا روپے بغیر محنت کے ان کی جھولی مبارک میں گر گئے- دنیا کے مہنگے ترین ہار اور محلوں کی ملکیت بھی تو اسی “جمہوریت” کی حسین “روحوں” اور “حوروں” کی لاڑکانہ اور نوابشاہ پر نظر الفت کا نتیجہ ہیں- ورنہ بلاول ہاوس کسی فقیر کی جھونپڑی کا منظر پیش کرتی اور گڑھی خدا بخش کے آگے گائے بھینسیں اس طرح بندھی ہوتیں جس طرح سندھ کے “گھوسٹ سکولز” میں بندھی نظر آتی ہیں۔

مطیع میاں کو شاہ رائونڈستان کی بھی یاد تازہ کروانی چاھئیے جو ضیاء الحق کا سیاسی مشن لے کر چل رہے ہیں- آجکل وہ ملک خداداد کے وزیر اعظم جانے جاتے ہیں- اسی مشن کی وجہ سے وہ طاقت کے نشے میں چور سپریم کورٹ پر حملہ آور ہوگئے- ان کے سمدھی جی نے برملا اعتراف کیا کہ انھوں نے منی لانڈرنگ کی ہے مگر مجال ہے کہ شاہ جی کے ماتھے پر بل آتا- انہیں اپنے قریب اور کیا اور قرض اتارو ملک سنوارو کا نعرہ مستانہ لگاتے ہوئے قوم کا پیسہ اس کے باسیوں کی بجائے اپنی دھرتی دوم، جدہ پہنچا دیا- کارگل کی جنگ دشمن کے آگے ہار دی، مشرف کو مروانے ہی لگے تھے کہ بووٹ آگئے اور شاہ جی بیت ثانی پہنچ گئے جہاں، “اللہ کے فضل و کرم سے”، ایک اور ڈکٹیٹر سے ڈییل کرنے کے بعد سٹیل مل لگائی- اگر آمرانہ بدروح چاہتی تو ضیاء کے دور کو واپس لے آتی مگر ایک خاموش این آر او ہوا اور “جمہوریت” کے چیمپینز ملک بدر کر دیے گئے- ستم تو یہ ہے کہ ان کے پیچھے قوم کے غریب مرتے رہے اور پردیس میں پلاو، زردے اڑتے رہے۔

یہ ایک آمر مشرف کی بدولت ہی تھا کہ ملک میں نئے ٹی وی چینلز اور اخبارات کھولنے کی آزادی دی گئی ورنہ “جمہوریت” کی زندہ لاش کو رونے والے مطیع میاں کسی تپڑ یا تھڑے پر بیٹھ کر ایک تھرڈ کلاس اخبار یا گوسیپ میگزین کے کالم نگار ہوتے- اس حقیقت سے اگر وہ منہ چھپاتے ہیں تو وہ کسی اور کے نہیں، اپنے ساتھ ہی دغا کرتے ہیں کیونکہ تاریخ صرف کڑوا سچ لکھنا چانتی ہے۔

یہ ایک آمر ہی تھا جس کے دوسرے این آر او کی بدولت تمام سیاست دانوں کے گناہ صغائر و کبائر بغیر عدالت میں استغاثہ کے معاف کر دیے گئے- وہی چور، اچکے، ڈاکو، لٹیرے اور کروڑوں کا غبن کرنے والے کرپٹ سیاستدان قوم کو ایسے پیش کیے گئے جیسے براھیم و لوط کے سامنے فرشتے انسانوں کی شکل میں پیش کیے گئے تھے- مفاہمت کی سیاست میں تو گویا حسن یوسف پنہاں تھا کہ جس کی تاب نہ لاتے ہوئے ملک کے سب سے بڑے شہر میں دس ہزار لوگ کٹ مرے- یاد رہے کہ این آر او ایک ایسی غلطی تھی جو آمر کو ہمیشہ کے لیے لے ڈوبی- جس وردی نے بھٹو کو طاقت دلائی، اسی نے این آر او کے “حاجی” بنائے- کجا یہ کہ قوم کو جمہوریت کا حسن ملتا، روٹی، کپڑا، مکان ملتا، “مدبرین جمہوریت” مسکین کی روکھی سوکھی چھین کر یوں نگل گئے کہ غریب و غربت ماضی بعید کا قصہ لگنے لگے- ملک جمہوریت کی آڑ میں بجلی سے گیا، فیکٹریاں ایک ایک کرکے بند ہوتی گئیں۔ مگر قوم کے جمہوری نا خدا عوام کو قربانیوں کا درس عظیم دیتے رہے۔ آمری اور جمہوری ادوار کے قرضے دیکھئیے- کس نے ملک کو ترقی دی، یہ مطیع میاں کے لیے ایک عقدہ ہے جو کبھی نہ کبھی وا ہو ہی جائے گا۔

مطیع میاں جنرل ضیاء کی باقیات پر ٹسوے بہاتے ہوئے یہ بھول گئے کہ ان کی کابینہ میں جمہوریت کے پیران پیر یوسف رضا گیلانی بھی تھے- اتفاق سے یہ وہی صاحب ہیں جو کسی زمانے میں اپنے بچوں کی فیس تک مانگ کے دیتے تھے۔ جمہوریت نے کایا کیا پلٹی، قومی خزانے سے محلات بنائے، ہیروڈز میں شاپنگ کی اور اگلی نسلوں تک کے لیے خوب مال جمع کیا۔ مگر مطیع میاں کو یہ سب کیونکر نظر آئے۔ انہیں تو راجہ پرویز اشرف کا آئی پی پییز میں کرپشن تو گناہ نظر ہی نہیں آتا۔ اس سے جڑی کامران فیصل کی شہادت سے وہ واقف ہی نہیں۔اسے ان کا ذہنی فتور کہئیے یا میرا حسن ظن۔ شاید وہ ان کے کاموں کو اعمال حسنہ سمجھ بیٹھے ہیں۔

مطیع میاں کے الفاظ زرداری صاحب کی حالیہ تقریر کے تناظر میں دیکھئیے۔ جو ڈیمیج کنٹرول شیری رحمان اور قمر الزمان کائرہ نہ کرسکے، وہ کام شاید تنویر زمانی اور مطیع میاں کے سپرد کیا گیا ہے۔ یہ بھی ممکن ہے کہ جمہوریت کی آڑ میں اپنا ذاتی بدلہ لینے کی کوشش کر رہے ہوں- سچ تو یہ ہے کہ قوم جاگ چکی ھے۔ اب دیکھو دیکھو کون آیا، بھٹو زندہ، بی بی شہید، جمہوریت انتقام، جیے مہاجر جیسے گھسے پٹے الفاظ کی کوئی اوقات نہیں رہی۔ رہی بات جمہوری روحوں اور آمریت کے بد روحوں کی، حقائق آپ کے سامنے رکھ دیے گئے ہیں۔ فیصلہ آپ نے کرنا ہے۔

آپ سب سے ایک مودبانہ گزارش کروں گا۔ اگر آپ معاشرے کی بدروحوں اور ان کے ہر قسم کے استحصال سے تنگ ہیں تو مندرجہ ذیل نظم اعتزاز احسن کی آواز ذہن میں لا کر پڑھئیے اور تالیاں بجا کر جمہوریت کے حسن کو دوام بخشئیے۔

دنیا کی تاریخ گواہ ہے
عدل بنا جمہور نہ ہو گا
عدل ہوا تو دیس ہمارا
کبھی بھی چکنا چور نہ ہو گا
عدل بنا کمزور ادارے
عدل بنا کمزور اکائیاں
عدل بنا بے بس ہر شہری
عدل بنا ہر سمت دھائیاں
اوردنیا کی تاریخ میں سوچو
کب کوئی منصف قید ہوا ہے؟
آمر کی اپنی ہی اَنا سے
عدل یہاں ناپید ہوا ہے
عدل کے ایوانوں میں سن لو
اصلی منصف پھر آئیں گے
روٹی کپڑا اور گھر اپنا
لوگوں کو ہم دلوائیں گے
آٹا بجلی پانی ایندھن
سب کو سستے دام ملے گا
بے روزگاروں کو ہر ممکن
روزگار اور کام ملے گا
ریاست ہو گی ماں کے جیسی
ہر شہری سے پیار کرے گی
فوج لگے گی سب کو اچھی
جب سرحد کے پاس رہے گی
جاؤجاؤ سب سے کہ دو
محمد علی جنا ح نے لوگو
دیکھا تھا جو سپنا سب کا
ساری دنیا پراب ہو گا
سایہ ایک اور ایک ہی رب کا
وہ رب سچا وہ رب سانجھا
وہ ہرمذھب ہردھرم کا رب ہے
مسلم ہندو سکھ عیسائی
ہرانسان کے کرم کا رب ہے
سانجھا مالک سانجھا خالق
اسکے در پے سب حاصل ہے
عدم تشدد اسکا رستہ
امن ہمارا مستقبل ہے
ظالم اورغاصب کی دشمن
جنتا اب سے عیش کرے گی
مظلوموں کی آخر
جاری جدوجہد رہے گی
رستہ تھوڑا ہی باقی ہے
دیکھودیکھو وہ منزل ہے
ظالم ڈرکے بھاگ رہا ہے
جیت ہمارا مستقبل ہے

پاکستان زندہ باد

ٹویٹر پر اتباع کیجئیے

@periqlytos

—————————————————————————————————————————–

پس تحریر: کسی نتیجے پر پہنچنے سے پہلے مندرجہ ذیل باتیں گوش گزار کر لیجئیے۔

میں نے ہمیشہ جمہوریت پر یقین رکھا ہے اور اب بھی رکھتا ہوں۔ میں پاکستان میں ایسی حکومت کا خواہاں ہوں جس میں عوام کی فلاح مقدم ہو اور حکمران ہمہ وقت احتساب کے لیے اپنے آپ کو پیش کریں۔

میں کسی سیاسی و مذہبی جماعت کا حامی نہیں۔

میرا جناب مطیع اللہ جان صاحب سے کوئی عناد نہیں۔ وہ ایک تجربہ کار اور منجھے ہوئے صحافی ہیں مگر جمہوریت اور اس کی تشریح کے معاملے میں ان سے اختلاف رائے رکھتا ہوں۔ شکریہ۔

فیسبوک ۔۔۔۔ سوہان روح

آجکل فیسبوک کا جنون سب کے سروں پر سوار ہے۔ چھوٹی عمروں کے بچوں سے لے کر بڑی عمر کے لوگوں تک سب اس کے سحر میں مبتلا ہیں۔ کم سن ذہن تو اپنے وقت کے ساتھ اس سے ہم آشنا ہو جاتے ہیں مگر عمر رسیدہ لوگوں کو جدید دور کے اس نخرے سے واقفیت میں وقت لگ جاتا ہے۔

عرصہ ایک ماہ پہلے ایک حضرت سے ملاقات ہوئی۔ بڑے پرتپاک اور شاعرانہ انداز میں ملے۔ فرمانے لگے۔ “نام میرا میکال، عمر 55 سال، مزاج باکمال، مگر فیسبوک کا اکاونٹ بنانا محال، ذرا مدد کر دیجئیے”۔  میری خوش اخلاقی کہئیے یا جذبہ ہمدردی سے سرشاری، مدد کی حامی بھر لی۔ خیر! ان کا اکاونٹ بنا دیا اور ایک عدد بنا دانتوں کے مسکراتی تصویر بھی کھینچ لی۔ میکال صاحب خوشی سے پھولے نہیں سما رہے تھے۔ میرا شکریہ ادا کیا اور ہاتھ ملا کر چل دیے۔ ہمیں بھی دلی مسرت ہوئی کہ کسی انسان کا معمولی سہارا بنے۔

دو ہفتوں بعد میکال صاحب سے ایک محفل میں ملاقات ہو گئی۔ علیک سلیک کیا ہوئی، دشنام طرازی پر اتر آئے۔ بھرے مجمعے میں فیسبوک کی رمز (پاس ورڈ) بھولنے کا دکھڑا سنایا اور مصیبت کا ذمہ دار بھی ما بدولت کو ٹھہرا دیا۔ اگرچہ ان کی قیامت نما صعوبت کی ذمہ داری میرے جوان عمر کاندھوں پر تو نہ تھی، تاہم ان کی بات ٹھنڈے دل سے سنتا رہا۔ میری دلائلِ صفائی ان کے مزاجِ غیض و غضب پر تیل چھڑکنے کا کام کرتی رہیں۔ ہر چند کچھ لوگوں نے بیچ بچاو کرانے کی کوشش کی جو بے سود ثابت ہوئی۔ کچھ دیر میکال صاحب کے عتاب کا شکار رہنے کے بعد مابدولت، بھری بزم سے اٹھ کر چل دیے۔

جوں جوں قدم گھر کی طرف بڑھ رہے تھے، رہ رہ کر اپنی فروماندگی کا احساس ہو رہا تھا۔ اپنی خاکساری پر حد درجہ ندامت تھی۔ ملال تھا کہ کہ ماند پڑنے کا نام نہیں لے رہا تھا۔ گھر پہنچا تو ابا نے اداس چہرے کہ وجہ پوچھی۔ بپتا سننے پر کہنے لگے “وے میریا پترا! تینوں کینی واری کہیا اے کہ اک نا، تے سو سکھ، اک ہاں، تے سو دکھ ۔ تینوں سمجھاننے وی آں کہ اینا سگا نہی بنی دا کسے دا” ۔ اتنا کہہ کر وہ اپنے کمرے کی جانب بڑھ گئے اور میں اپنے کمرے کی جانب۔ تمام شب یہ سوچتے گزر گئی کہ اچھائی کی ٹھیکے داری مہنگی پڑگئی۔ شرافت کی تحفگی اور فیسبوک کی عمدگی ایک شخص کے جہل و اشتعال کی بھینٹ چڑھ گئیں۔ پھر ایک ٹھنڈی آہ بھری اور بے ساختہ کہہ اٹھا “فیسبوک۔۔۔ سوہان روح”۔

———————————————————————————-

ٹویٹر پر اتباع کریں

@periqlytos